Yeh zindagi

Umeed mein intezaar ka alam na pucho
Kyu log kehte hai zindagi badi chhoti hoti hai

Ek lamha hasti hai, ek lamha roti hai
Ye pal bhar ki zindagi, badi lambi hoti hai

Hausla aur faisla, kash-ma-kash me rehte hain
Imtihaan ki jab inteha hoti hai

Hausla rakhne wale ki haar kabhi nahi mumkin
Mumkin hai zindagi ke palon mein, koi seekh nai hoti hai

Kyun zindagi se ho, koi shikwa ya gila
kyun ho koi udasi ka mausam

Kyu na ho, ek mausam bahar ka
Yaaron ki meethi chehkti pukaar ka

Mere bas me hota agar, toh main rok bhi deta
Ye waqt jaata hua, ye waqt jaata hua

Zindagi mujh mein hai baaqi jab tak
Sochta hun chalo kuch yun kar lu

Kisi ke ghamon ko baat lu
Lateefon me yeh zindagi kaat lu

یہ زندگی

امید میں انتظار کا عالم نہ پوچھو
کیوں لوگ کہتے ہیں زندگی بڑی چھوٹی ہوتی ہے

اک لمحہ ھنستی ہے ، اک لمحہ روتی ہے
یه پل بھر کی زندگی ، بڑی لمبی ھوتی ہے

حوصلہ اور فیصلہ ، کشمکش میں رہتے ہیں
امتحان کی جب انتہا ہوتی ہے

حوصلہ رکھنے والے کی ہار کبھی نہیں ممکن
ممکن ہے زندگی کے پلوں میں ، کوئی سیکھ نیئی ہوتی ہے

کیوں زندگی سے ہو کوئی شکوہ یا گلہ
کیوں ہو کوئی اداسی کا موسم

کیوں نہ ہو ایک موسم بہار کا
یاروں کی میٹھی چہکتی پکار کا

میرے بس میں ہوتا اگر تو میں روک بھی دیتا
یہ وقت جاتا ہوا ، یہ وقت جاتا ہوا

زندگی مجھ میں ہے باقی جب تک
سوچتا ہوں چلو کچھ یوں کر لوں

کسی کے غموں کو بانٹ لوں
لطیفوں میں یہ زندگی کاٹ لوں

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s